Monday, September 25, 2017

کیا کرتے

میں خود ہی مرا تھا ساون پہ، موسم کے اشارے کیا کرتے 
موجوں سے محبت مجھ کو تھی، بے جان کنارے کیا کرتے
دل ہار گیا تھا اُس پر میں، اُسے میں نے ہی اپنایا تھا 
تقدیر بگاڑا تھا خود ہی، معصوم ستارے کیا کرتے

لوٹا تو کسی نے نہ دیکھا، پوچھا تو سبھی خاموش رہے 
میں چھوڑ گیا تھا گھر اپنا، بے رنگ چوبارے کیا کرتے

طوفان کی شدت اتنی تھی، آتش کا اثر برباد ہوا 
گھر ڈوب گیا تھا اشکوں میں، بدمست شرارے کیا کرتے

رنگوں سے مزین دل میرا برباد ہوا تھا لمحوں میں 
آنکھوں میں اندھیرا چھایا تھا، پُرکیف نظارے کیا کرتے

مکمل تحریر >>

Sunday, September 24, 2017

Here’s why PTCL is Pakistan’s worst internet service provider

PTCL, which has been rechristened as “Perennially Tortured Consumers’ League”, for reasons explained later, makes sure that its customers get the worst services.
My bad luck started five years ago, when I obtained a telephone number (051-28***24) from PTCL, on my younger brother’s name.
The services were almost always poor, with frequent disconnections, low browsing speed and crushingly low download speed. I hope and wish they maintain a log of the complaints received for each number. If such a log exists, it shall speak for itself.
Not until three months back, after several complaints, was I told that my connection was compatible with the optic-fibre option, which I had opted for, and that I had never received the 4MB internet that I was being charged for. I have on average paid 24-2600 rupees to PTCL, chiefly for internet services, because the phone is hardly used once or twice in a month for local calls.
Which means I was being charged for a service that was not being offered to me. Is not that tantamount to fraud, and a breach of trust?
I must take legal counsel on that.
After knowing that my landline had not been compatible, I asked for assistance in resolving the issue, because internet is very important for the work I do. I was asked to visit the PTCL Customers Care Centre in Islamabad.
On the instruction/advice of the PTCL employee, my telephone number was ‘made compatible’ with Optic Fibre service, or so I was told. My number was changed to 051-23***40, and I was promised robust, uninterrupted, services.
Almost three months have passed since then, and there has not been a week when I have needed internet and not complained to PTCL, requesting them to resolve the frequent disconnection issues that I have been facing. In fact, the number of frequent disconnections has increased considerably since then.
The response to my complaints have been false assurances, gimmickry of words, lip-service, half-efforts, or, outright silence. After almost every complaint made through 1218, I also sent messages to PTCL through its Facebook page, and Twitter handle (screenshots of which are readily available). So pathetic is the PTCL’s customer service that one of my complaints was responded to after 5 days (120 hours), after several reminders and ‘hyper’, frantic, calls. This is despite of the fact that every time I was promised a ‘quick resolution’ within 48 hours.
Also surprising is the fact that despite of no efforts being made, or despite of the service not improving, I continue receiving automated calls telling me PTCL’s records showed that my issue is resolved. Are the employees fooling their higher ups? Or are the higher ups lax, inefficient, feeding off the tax-payers’ hard earned money?
Today is the Sixth (6th) day of my latest complaint (#54). My internet gets disconnected after every few minutes. Adding insult to the injury, the ugly website of PTCL, offering ‘packages’, pops up, whenever the connectivity returns, replacing my open windows. The PTCL website forcibly open for three to four times every time, after the connection restores. This constant popping up of the PTCL website has made me hate the brand, as if the services were not pathetic enough already.
Now, having lost all hope, and in a sheer act of frustration and a sense of being let down, despite of me paying all my bills on time, I plan soon to burn in front of the national press club all the bills that I have paid, their telephone set, their modem, and an effigy of the PTCL chairman, which would symbolize the entire inept, dumb, useless, parasitic, leech-like, management and foot workers, who are sucking the life out of the nation’s prime telecommunication organization. I hope to gather other affectees of PTCL’s criminal inefficiency, and after the protest demonstration, which will have wide coverage – we will ensure that it does – we will think how to legally pursue this case further.

Enough is enough.
مکمل تحریر >>

Wednesday, September 13, 2017

پولو کی واپسی

گلگت بلتستان کے متعدد دیہات میں ایسے پولوگراونڈز موجود ہیں جن میں ایک عرصے سے پولو نہیں کھیلی گئی۔ 

میرے گاوں گلمت میں موجود مستطیل شکل کا پولو گراونڈ والی بال ٹورنامنٹس، فٹبال ٹورنامنٹس، شادیوں کی تقریبات، ثقافتی پروگراموں اور اموات کی رسومات کے لئے تو استعمال ہوتا ہے، لیکن اس میں کافی عرصے سے پولو نہیں کھیلی گئی تھی۔ 

کل، البتہ، چپورسن سے تعلق رکھنے والی ٹیموں نے، جو غذرمیں ایک ٹورنامنٹ میں حصہ لینے کے بعد واپس جارہے تھے، اس میدان میں پولو کھیل کر تفریح اور خوشی کا سامان پیدا کرنے کے ساتھ ساتھ ماضی کے عظیم پولو پلئیرز نوران بیگ، ارباب گوہر حیات، ارباب پوئی، ارباب لال بیگ، یوسف بیگ، ارباب گلبست، عزیز اللہ، شاہ گل عزیز، فیروز شاہ، عبدل محمد، سکندر خان، امان اللہ، پانشمبی، صدن شاہ، محمد روئی، سلطان علی (پہلوان)، غلام الدین، محمد رفیع، آدینہ، سراج الدین، محمد وفی، ظفر اللہ اور دیگر کی یاد تازہ کردی۔ 

ریاست ہنزہ کے خاتمے کے بعد ضلع ہنزہ میں پولو مسلسل زوال پذیر رہی ہے۔ پاک افغان سرحد پر واقع وادی چپورسن ضلع ہنزہ میں وہ واحد علاقہ ہے جہاں اب بھی گھوڑے پالے جاتے ہیں اور پولو کھیلی جاتی ہے۔ 

پولو ایک مہنگا شوق ہے۔ گھوڑا پالنے کے لئے لاکھوں روپے درکار ہوتے ہیں۔ تین یا چار عشرے پہلے ہمارے علاقے میں تقریباً ہر گھر میں کم از کم ایک گھوڑا ضرور ہوتا تھا۔ تاہم، تعلیمی ضروریات اور صحت کے بڑھتے اخراجات کی وجہ سے اب گھوڑے پالنے کے لئے وسائل کم پڑگئے ہیں، جس کی وجہ سے پولو بھی زوال کا شکار ہوچکی ہے۔ 

اگر ضلعی انتظامیہ اور صوبائی حکومت اس قومی کھیل کوترقی دینے کے لئے وسائل مہیا کرے اور کھلاڑیوں کی مدد کرے تو گلگت بلتستان کے غیر آباد پولو گراونڈز پھر سے سرپٹ دوڑتے گھوڑوں کے قدموں کی دھمک سے آباد ہوسکتےہیں۔ پولو صرف ایک کھیل نہیں، بلکہ لوگوں کو جوڑنے اور باہم مربوط کرنے کا ایک ذریعہ بھی ہے۔ پولو کی ترویج تعمیرِ معاشرہ اور ثقافت کی احیا کے لئے ناگزیر ہے۔ 

نوٹ: اس تحریر میں موجود کھلاڑیوں کے نام مرحوم شاہ گل عزیز کے آخری انٹرویو سے لئے گئے ہیں۔
مکمل تحریر >>

Monday, September 11, 2017

تاو چنگ

تاو چنگ ایک ایسا لفظ ہے جسے سُنتے ہی ہمسایہ ملک چین کی یاد آجاتی ہے، اور کیوں نہ ہو!
 ہُو جِن تاو چین کے صدر رہے، جبکہ چنگ کروڑوں چینی باشندوں کے نام میں شامل ہے۔ اس لئے تاو چنگ کو چین سے منسلک کرنا منطقی ہے۔

نیز، تاو تے چنگ ایک مشہور چینی کتاب کا بھی نام ہے، جسے چینی تاریخ میں اہم مقام حاصل ہے۔ کہا جاتا ہے کہ تاو تے چنگ نامی یہ کتاب سینکڑوں سال قبلِ مسیح تحریر کی گئی تھی، لیکن مصنف کے بارے میں کوئی حتمی معلومات میسر نہیں ہیں۔ عین ممکن نے کہ مختلف لوگوں نے اسی کلاسیکی کتاب کی تصنیف میں کردار ادا کیا ہو۔

انٹرنیٹ پر موجود مواد کے مطابق لفظ تاو چینی زبان میں "راستے "، "راہ"، "سڑک" کو کہتے ہیں۔ نیز تاو نام کا ایک مذہب چین کی تاریخ میں بہت مشہور رہا ہے، جسے آج بھی تاویزم (تاو ایزم) کے نام سے جانا جاتا ہے۔ 

لفظ چنگ لغوی اعتبار سے مختلف معنوں میں استعمال ہوا ہے۔ مثلاً چینی تاریخ کے مانچو دور (سترہویں سے انیسویں صدی) سے تعلق رکھنے والے افراد یا اشیا کو چنگ کہہ کر پُکارا گیا ہے۔
اسی طرح، چنگ ایک انتہائی قدیم  مذہبی صحیفے کا بھی نام رہا ہے۔

درج بالا حقائق سے معلوم ہوتا ہے کہ  
لفظ تاو اور چنگ چین کی تاریخ میں یقیناً بہت اہمیت رکھتے ہیں۔ ان الفاظ کی اہمیت گلگت بلتستان کی تاریخ میں بھی ہے۔

سینکڑوں سالوں تک جو چیتھڑے، بشمول جانوروں کی سوکھی ہوئی کھال اور کپڑے، جوتوں کی جگہ، پاوں میں چمڑے سے بنی ڈوریوں اور گھاس پوس سے بنی رسیوں کی مدد سے باندھ کر یہاں کے باسی شکار کرنے، یا گلہ بانی کرنے، پہاڑوں پر چلے جاتے تھے، ان بندھے ہوے چھیتڑوں کو بھی بروشسکی، اور وخی، میں تاوچنگ کا نام دیا جاتا ہے۔

کھوار میں لفظ تاچنگ مستعمل ہے، جبکہ شینا میں تھاوتے استعمال کیا جاتا ہے۔ 

وجہ تسمیہ معلوم نہیں۔
مکمل تحریر >>